COVID-19 کورونا وائرس کے بارے میں مرنے والوں کی لاشیں کیا بتاتی ہیں؟

Abu Dujana

Thread Starter
⭐⭐⭐⭐⭐⭐
Charismatic
Expert
Popular
Helping Hands
Joined
Apr 25, 2018
Local time
4:22 AM
Threads
81
Messages
963
Reaction score
1,360
Points
452
Location
Karachi, Pakistan
Gold Coins
513.90
جرمنی کے رابرٹ کوخ انسٹی ٹیوٹ نے COVID-19 مریضوں کی لاشوں کے پوسٹ مارٹم کے نتائج پر مبنی رپوٹ پيش کر دی۔ اس ميں ان اہم ترين سوالات کے جوابات موجود ہیں جو اس وقت ہر انسان کے اعصاب پر سوار ہيں۔

5000

کورونا وائرس خاص طور سے کن لوگوں کے لیے خطرہ ہے؟ کون کون سی بیماریوں میں پہلے سے مبتلا مريضوں کو زیادہ خطرات لاحق ہیں؟ کیا کووڈ انیس کا شکار ہو کر مرنے والوں کی لاشوں کا پوسٹ مارٹم ضروری ہے؟

ان سولات کی روشنی ميں رابرٹ کوخ انسٹی ٹیوٹ (آر کے آئی) کے پوسٹ مارٹمز پر مشتمل انکشافات خوفناک ہیں۔

برلن میں قائم رابرٹ کوخ انسٹی ٹیوٹ (آر کے آئی) کی ویب سائٹ پر اپریل کے آغاز میں مردہ COVID-19 مریضوں کے داخلی جسمانی معائنے یعنی پوسٹ مارٹمز اور ایئروسول پیدا کرنے والے اقدامات سے گریز کرنے کے نظریے کی وکالت کی گئی تھی تاہم متعدی بیماریوں کے ليے ذمہ دار وفاقی ایجنسی نے بعد میں اپنا خیال بدل لیا۔ انسٹی ٹیوٹ کے نائب صدر ، لارس شاڈے نے زور دے کر کہا کہ پوسٹ مارٹم ، درست عمل ہے، خاص طور پر اگر یہ بیماری نئی ہے تو اس کا شکار ہوکر مرنے والوں کا زیادہ سے زیادہ پوسٹ مارٹم کرنا چاہيے لیکن مناسب احتیاطی تدابیر کے ساتھ ۔

جرمن پیتھالوجسٹس کی فیڈرل ایسوسی ایشن کے صدر، کارل فریڈرک بیورگ کا کہنا ہے، " پوسٹ مارٹم نہ کرنا ایک غير دانستہ غلطی ہے۔" ان کا کہنا ہے کہ COVID-19 سمیت تمام جدید متعدی بیماریوں کی وجوہات، ساختيات اور پس منظر جاننے کے ليے پوسٹ مارٹم بہت ضروری ہے۔

5001


پیتھالوجسٹ کلاؤس پوشل کے مطابق 22 مارچ سے 11 اپریل تک، انہوں نے 65 مردہ COVID-19 مریضوں کا پوسٹ مارٹم کیا۔ ان میں سے 46 کو پہلے ہی سے پھیپھڑوں کی بیماریاں تھیں، 28 مردوں کو داخلی ٹرانسپلانٹڈ اعضاء کی بیماریاں تھیں۔ 10 کینسر، ذیابیطس یا موٹاپے سے جڑے امراض کے تھے اور 16 ڈیمینشیا میں مبتلا تھے۔ ہلاک ہونے والوں میں سے کچھ کو یہ بیماریاں تھیں۔ کلاؤس پوشل کے ڈیٹا بیس میں اب 100 سے زیادہ پوسٹ مارٹمز کے بارے میں معلومات موجود ہیں۔ وہ سبھی تصدیق کرتے ہیں کہ مرنے والوں میں سے کوئی بھی خصوصی طور پر COVID-19 سے نہیں مرا لیکن سب کو دل کی تکلیف، ہائی بلڈ پریشر، آرٹیروسکلروسیس، ذیابیطس ، کینسر، پھیپھڑوں یا گردے کی خرابی یا جگر فعال نہ رہنے کے سبب موت کے منہ ميں جانا پڑا۔

تاہم ، پوشل کے مطابق ، کورونا کو سنجیدگی سے لیا جانا چاہیے۔ لیکن وہ وسیع پیمانے پر خوف کو مبالغہ آمیز تصور کرتے ہیں۔ پوشل کا کہنا ہے، ''یہ خاص طور پر خطرناک وائرل بیماری نہیں تھی‘‘۔ لہٰذا کچھ پابندیاں جیسے کہ میت کی آخری رسومات پر رشتہ داروں کی شرکت پر پابندی کو وہ بلا جواز سمجھتے ہیں۔ طبی معائنہ کرنے والوں کا کہنا ہے، ''آپ کو میت کوچومنا نہیں چاہيے، لیکن آپ ان کو دیکھ سکتے ہیں اور ان کو چھو سکتے ہیں بشرطيکہ آپ اس کے بعد ہاتھ دھو لیں۔‘‘

 

Abu Dujana

Thread Starter
⭐⭐⭐⭐⭐⭐
Charismatic
Expert
Popular
Helping Hands
Joined
Apr 25, 2018
Local time
4:22 AM
Threads
81
Messages
963
Reaction score
1,360
Points
452
Location
Karachi, Pakistan
Gold Coins
513.90
اٹلی اور سوئٹزرلینڈ میں تحقیقات

پوشل کا ڈیٹا تقریباﹰ اٹلی کی وزارت صحت کی تحقیق کے مطابق ہے، جو پوسٹ مارٹم پر مبنی نہیں ہے، بلکہ 1738 ہلاک مریضوں کی پہلے سے چلی آرہی بیماریوں کی ہسٹری پر مشتمل ہے۔ COVID-19 کے علاوہ، 96.4 فیصد کو کم از کم ایک اور بیماری تھی۔ سب سے عام ہائی بلڈ پریشر (70 فیصد) ، ذیابیطس (32 فیصد) اور قلبی امراض (28 فیصد) تھے۔ اٹلی میں مرنے والوں کی اوسط عمر 79 سال ہے - ہیمبرگ میں 80 سال۔



سوئٹزرلینڈ کے شہر بازل کی یونیورسٹی ہسپتال میں پوسٹ مارٹم کے سربراہ الیگزانڈر زنکوف کے زير معائنہ تمام 20 مردہ کوویڈ 19 کے مریضوں کو بھی ہائی بلڈ پریشر کا سامنا تھا۔ اس کے علاوہ، ان میں سے زیادہ تر اوور ويٹ یا زیادہ وزن کا شکار تھے۔ دوتہائی کو دل کی تکلیف تھی اور ایک تہائی کو ذیابیطس۔ تاہم ، بازل سے تعلق رکھنے والے چیف پیتھالوجسٹ اس بیماری کو نسبتا بے ضرر نہیں سمجھتے ۔ زنکوف نے کہا ، ''شاید یہ تمام مریض CoVID-19 کا شکار ہوۓ بغیر کچھ عرصہ زیادہ زندہ رہتے ، شاید ایک گھنٹہ ، شاید ایک دن ، ایک ہفتہ، یا ایک سال۔‘‘

جرمنی میں رسک گروپ بہت بڑا ہے

برلن میں تحقیقاتی مرکز شاریٹے کے چیف پیتھالوجسٹ ، ڈیوڈ ہورسٹ نے بھی روزنامہ برلینر سائٹنگ کو ایک انٹرویو دیتے ہوۓ اس امر کی تصدیق کی کہ تمام میتوں کو پچھلی بیماریوں کا سامنا تھا، یعنی قلبی نظام یا پھیپھڑوں کا عارضہ ۔ ان میں سے کچھ کا وزن بھی زیادہ تھا۔ تاہم ، یہ بیماریاں جرمنی میں 65 سال سے زیادہ عمر کے لوگوں میں انتہائی عام ہیں۔ ہر تیسرا فرد ان سے متاثر ہے۔ ڈیوڈ ہورسٹ کے بقول، ''ہم اس اعتبار سے جرمنی میں ایک بہت بڑا رسک گروپ دیکھ رہے ہیں، جس میں کورونا انفیکشن زیادہ تر مہلک اثرات کا حامل ہوتا ہے۔‘‘

Reference:
Please, Log in or Register to view URLs content!
 

وزیر اعظم الکمونیا

★★★★★★
Staff member
Charismatic
Expert
Writer
Popular
P A K I S T A N
Joined
May 5, 2018
Local time
7:22 AM
Threads
179
Messages
4,822
Reaction score
6,433
Points
1,181
Location
آئی ٹی درسگاہ
Gold Coins
1,379.16
Username Change
Get Unlimited Tags / Banners
Permanently Change Username Color & Style.
Thread Highlight Unlimited
Change Username Style.
شئیرنگ کا شکریہ
اللہ تعالیٰ ہم سب کو اپنی حفظ و امان میں رکھے اور اس بیماری کا خاتمہ فرمائے آمین۔
اللہ تعالیٰ ہر قسم کی بیماری سے مسلمین مسلمات کو تا قیامت عافیت دے آمین
 

Doctor

⭐⭐⭐⭐⭐⭐
Charismatic
Designer
Expert
Writer
Popular
King of Alkamunia
ITD Supporter 🏆
Proud Pakistani
الکمونیا میں تو ایسا نہیں ہوتا
ITD Developer
Top Poster
Top Poster Of Month
Joined
Apr 25, 2018
Local time
4:22 AM
Threads
840
Messages
12,078
Reaction score
14,104
Points
1,801
Age
47
Location
Rawalpindi
Gold Coins
3,347.38
Get Unlimited Tags / Banners
Permanently Change Username Color & Style.
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Thread Highlight Unlimited
Change Username Style.
:masha-allah:
اللہ پاک ہمیں دین کی صحیح سمجھ اور عمل کی توفیق عطاء فرمائے
:jazak-allah:
ایسی ہی اچھی باتوں کا اشتراک جاری رکھیں
:goodpost:
 
Top
AdBlock Detected

We get it, advertisements are annoying!

Sure, ad-blocking software does a great job at blocking ads, but it also blocks useful features of our website. For the best site experience please disable your AdBlocker.

I've Disabled AdBlock    No Thanks