ساحل سے اٹھا ہے نہ سمندر سے اٹھا ہے : افروز رضوی

Lovely Eyes

Thread Starter
⭐⭐⭐⭐⭐⭐
Staff member
Charismatic
Expert
Writer
Popular
Emerging
Fantabulous
The Iron Lady
Joined
Apr 28, 2018
Local time
11:54 AM
Threads
322
Messages
1,256
Reaction score
1,987
Points
803
Gold Coins
2,544.01
Permanently Change Username Color & Style.
Get Unlimited Tags / Banners
Promotion from ITD Star to Super Star.
Get Unlimited Tags / Banners
Promotion from VIP to ITD Star.
Promotion from Senior Member to VIP.
ساحل سے اٹھا ہے نہ سمندر سے اٹھا ہے
افروز رضوی

4841

ساحل سے اٹھا ہے نہ سمندر سے اٹھا ہے
جو شور مری ذات کے اندر سے اٹھا ہے

دریائے محبت کے کنارے کبھی کوئی
ڈوبا ہے جو اک بار مقدر سے اٹھا ہے

وہ آئے تو اس خواب کو تعبیر ملے گی
جو خواب جزیرہ مرے ساگر سے اٹھا ہے

میں اپنے رگ و پے میں اسے ڈھونڈ رہی ہوں
جو شخص ابھی میرے برابر سے اٹھا ہے

رقصاں ہے مری آنکھ میں احساس کی مانند
منظر جو تری آنکھ کے منظر سے اٹھا ہے

پھولوں کو ترے رنگ نے بخشی ہے کہانی
خوشبو کا فسانہ ترے پیکر سے اٹھا ہے

اس شہر محبت میں وہ رکتا ہی نہیں ہے
جو شور ترے پیار کے محور سے اٹھا ہے

یہ اس کا رویہ یہ انا یہ لب و لہجہ
ان سب کے سبب امن و سکوں گھر سے اٹھا ہے

مہر و مہ و انجم میں اسے ڈھونڈنے والو
یہ سارا جہاں خاک کے پیکر سے اٹھا ہے

رہتا ہے مری آنکھ میں کاجل کی طرح سے
جو دور تمناؤں کے تیور سے اٹھا ہے

میں در سے ترے اٹھ کے اسی سوچ میں گم ہوں
کیا کوئی خوشی سے بھی ترے در سے اٹھا ہے

جو اس کی نظر سے کبھی افروزؔ اٹھا تھا
اس بار وہ محشر مرے اندر سے اٹھا ہے
 
Top
AdBlock Detected

We get it, advertisements are annoying!

Sure, ad-blocking software does a great job at blocking ads, but it also blocks useful features of our website. For the best site experience please disable your AdBlocker.

I've Disabled AdBlock    No Thanks