ہماری زراعت

Afzal339

Thread Starter
⭐⭐⭐⭐⭐⭐
Charismatic
Expert
Writer
Popular
Scientist
Helping Hands
Joined
Apr 25, 2018
Local time
7:18 AM
Threads
206
Messages
593
Reaction score
955
Points
460
Gold Coins
420.14
اللہ تعالی فضل و کرم سے پاکستان کا شمار ان ممالک میں ہوتا ہے جس میں آدھی سے زیادہ آبادی زراعت کے شعبے سے وابستہ ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ملکی قومی آمدنی کا انحصار بھی زیادہ تر زراعت ہی پر ہے۔ پاکستان کی آبادی جو اس وقت بیس کروڑ تک پہنچ چکی ہے تو ضرورت اس بات کی ہے کہ اتنی بڑی آبادی کی ضروریات کو پورا کرنے کے لئے ہمیں اپنی زراعت مزید بہتر کرنی چاہئے ۔
اور اس حوالے سے کسانوں کو ( جو جدید طور طریقوں سے ناواقف ہیں ) جدید زرعی آلات اور سائنسی طریقہ کاشت کی تعلیم بھی دینی چاہئے کیوں کہ ہمارے ملک کا کسان زرعی تعلیم و تربیت سے ناواقف ہونے کی وجہ سے زراعت کے جدید طریقے اپنانے سے ہچکچاہٹ محسوس کرتا ہے ملک عزیز میں زراعت کے رائج پرانے طریقوں کی وجہ سے ایک کسان زمین سے پیداوارا کی وہ مقدار حاصل نہیں کرپاتا جو جدید طریقے اپنا کر حاصل کیا جاسکاتا ہے کیوں کہ دیسی ہل زمین میں زیادہ گہرائی تک نہیں جاتا جس کی وجہ سے زمین کے نیچے تک کی ذرخیز مٹی استعمال میں نہیں آتی اور جو کاشتکار جدید زرعی آلات استعمال کرسکتے ہیں یاکرنا چاہتے ہیں تو وہ یا تو مالی اعتبار سے کمزور ہوتے ہیں (جس کے باعث جدید زرعی آلات خریدنے کی سکت نہیں رکھتے) یا انھیں اس بارے میں کوئی صحیح معلومات نہیں ہوتی ہیں ۔
یہی وجہ ہے کہ مشینوں کا استعمال بہت ہی کم ہوتا ہے، ملک میں ابھی بھی کچھ مقامات پر ٹریکٹروں کی جگہ جانوروں سے کام لیا جاتا ہے یعنی مشینوں کا استعمال عام نہیں ہے کاشتکاری کے نظام کو بہتر سے بہتر بنانے کے لیے چند تجاویز ہیں جو ذیل میں دیئے جارہے ہیں
پانی کی منصفانہ تقسیم کے حوالے سے مناسب اقدامات کئیے جائیں چھوٹے چھوٹے ٹکڑوں پر کاشت کے نظام کو بہتر بنایا جائے۔
ایسی بنجر زمین جس پر کاشتکاری ممکن ہے اور وہ ویران ہے اسے قابل کاشت بناکر کسانوں کے حوالے کی جائے تا کہ اس سے بھی فائدہ اٹھایا جاسکے
نجی و سرکاری زرعی انجینئرنگ ورکشاپس کا انعقاد کرکے ان میں عمدہ اور معیاری کھاد ، عمدہ بیج اور کاشتکاری کے متعلق سائنسی طریقہ کار کے بارے میں کسانوں کومعلومات فراہم کی جائیں۔
معیاری پیداوار کے لیے تجویز کردہ تدابیر و اقدامات سے کسانوں کو آگاہ کیا جائے امداد باہمی کے طریقوں کو فروغ دیا جائے۔
بغیر سود آسان قسطوں پر قرضوں کی فراہمی کو بلا امتیاز یقینی بنایا جائے۔
ضروری زرعی سامان و آلات سبسڈی کے ساتھ فراہم کیا جائے۔
فصلوں کو لگنے والی مختلف بیماریوں، حشرات الارض اور قدرتی آفات سے تحفظ کے لیے مدافعتی تدابیر کے بارے میں بھی کسانوں کو معلومات دی جائے

اور اس حوالے سے ضروری دواؤں وغیرہ کی فراہمی کو بھی یقینی بنایاجائے۔
 
Top
AdBlock Detected

We get it, advertisements are annoying!

Sure, ad-blocking software does a great job at blocking ads, but it also blocks useful features of our website. For the best site experience please disable your AdBlocker.

I've Disabled AdBlock    No Thanks