میر دیوار شاعری۔اسد غالب، میر تقی میر

PakArt UrduLover

Thread Starter
in memoriam 1961-2020، May his soul rest in peace
Charismatic
Designer
Expert
Writer
Popular
ITD Observer
ITD Solo Person
ITD Fan Fictionest
ITD Well Wishir
ITD Intrinsic Person
Persistent Person
ITD Supporter
Top Threads Starter
Joined
May 9, 2018
Local time
3:38 AM
Threads
1,354
Messages
7,659
Reaction score
6,964
Points
1,508
Location
Manchester U.K
Gold Coins
115.25
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Thread Highlight Unlimited
Thread Highlight Unlimited

Silent Rose

Staff member
⭐⭐⭐⭐⭐⭐
Designer
Emerging
Courageous
Respectable
Hypersonic
Joined
Sep 23, 2019
Local time
8:38 AM
Threads
78
Messages
2,169
Reaction score
3,299
Points
687
Age
49
Location
کراچی
Gold Coins
899.41
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
اشعار تو سر سے گزر گئے
البتہ ڈیزائن بہت زبردست ہے
(y)
 

PakArt UrduLover

Thread Starter
in memoriam 1961-2020، May his soul rest in peace
Charismatic
Designer
Expert
Writer
Popular
ITD Observer
ITD Solo Person
ITD Fan Fictionest
ITD Well Wishir
ITD Intrinsic Person
Persistent Person
ITD Supporter
Top Threads Starter
Joined
May 9, 2018
Local time
3:38 AM
Threads
1,354
Messages
7,659
Reaction score
6,964
Points
1,508
Location
Manchester U.K
Gold Coins
115.25
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Thread Highlight Unlimited
Thread Highlight Unlimited
اشعار تو سر سے گزر گئے
البتہ ڈیزائن بہت زبردست ہے
(y)
مکمل کلام دیکھئے شایئد اس با ر سر سے نہ گزرے
اس غزل کے آخر کی دو لائن کو ڈیزائن کیا ہے
کیونکہ یہ شعر ہی فقط ڈیزائن کے بیک گراونڈ
کیساتھ جچتا تھا۔پوری غزل ملا خطہ فرمایئں
اور لطف انداز ہوں۔شکریہ
****

بلا سے ہیں جو یہ پیشِ نظر در و دیوار (غزل)
از مرزا اسد اللہ خان غالب

بس کہ حیرت سے زپا افتادۂ زنہار ہے
ناخن انگشت بتخال لب بیمار ہے
جی جلے ذوق فنا کی ناتمامی پر نہ کیوں
ہم نہیں جلتے نفس ہر چند آتشبار ہے
زلف سے شب درمیاں دادن نہیں ممکن دریغ
ورنہ صد محشر بہ رہن جلوۂ رخسار ہے
ہے وہی بدمستی ہر ذرہ کا خود عذر خواہ
جس کے جلوے سے زمیں تا آسماں سرشار ہے
بس کہ ویرانی سے کفر و دیں ہوے زیر و زبر
گرد صحراے حرم تا کوچۂ زنار ہے
اے سر شوریدہ ذوق عشق و پاس آبرو
جوش سودا کب حریف منت دستار ہے
مجھ سے مت کہ تو ہمیں کہتا تھا اپنی زندگی
زندگی سے بھی مرا جی ان دنوں بیزار ہے
آنکھ کی تصویر سر نامے پہ کھینچی ہے کہ تا
تجھ پہ کھل جاوے کہ اس کو حسرت دیدار ہے
وصل میں دل انتظار طرفہ رکھتا ہے مگر
فتنہ تاراج تمنا کے لیے درکار ہے
ایک جا حرف وفا لکھا تھا سو بھی مٹ گیا
ظاہرا کاغذ ترے خط کا غلط بردار ہے
آگ سے پانی میں بجھتے وقت اٹھتی ہے صدا
ہر کوئی درماندگی میں نالے سے ناچار ہے
در خیال آباد سوداے سر مژگان دوست

صد رگ جاں جادہ آسا وقف نشتر زار ہے

خانماں ہا پائمال شوخی دعوی ے اسدؔ
سایۂ دیوار سیلاب در و دیوار ہے



 
Top
AdBlock Detected

We get it, advertisements are annoying!

Sure, ad-blocking software does a great job at blocking ads, but it also blocks useful features of our website. For the best site experience please disable your AdBlocker.

I've Disabled AdBlock    No Thanks