ہیکنگ کے متعلق معلومات قسط اول

Afzal339

Thread Starter
⭐⭐⭐⭐⭐⭐
Charismatic
Expert
Writer
Popular
Scientist
Helping Hands
Joined
Apr 25, 2018
Local time
5:24 PM
Threads
226
Messages
652
Reaction score
1,044
Points
510
Gold Coins
449.01
ہیکنگ کیا ہے اور اس سے بچاؤ کے آسان اور میسر طریقے کیا ہیں ؟
سوشل میڈیا جیسا کہ فیس بک پر آئے روز آپ نے یہ ضرور سنا ہوگا کہ ان کا اکاؤنٹ ہیک ہو گیا، یا ہو سکتا ہے یہ حادثہ آپ کے ساتھ بھی پیش آ چکا ہو۔ ایک زمانہ کمپیوٹر اور موبائل فون کی دنیا سے منسلک ہونے کی وجہ سے کم از کم میں اپنے تجربے کی بنیاد پر یہ کہہ سکتا ہوں کہ اکثر وبیشتر اکاؤنٹ ہیک ہونے میں صرف اور صرف ہماری اپنی کم علمی کا دخل ہے۔
اور دوسرے لوگ صرف اور صرف ہیکنگ کے ذرائع میسر ہونے اورمعلومات ہونے کی وجہ سے اکاؤنٹس ہیک کرنے میں کامیاب ہو جاتے ہیں وگرنہ اس کے سوا اور ذرائع نہ ہونے کے برابر ہیں جیسا کہ کسی کمپنی کا سرور ہیک ہوجانا وغیرہ ۔
اور دوسری بات یہ ہے کہ آج سے چند سال پہلےجو صورت حال تھی وہ اب نہیں رہی اب کسی کا بھی اکاؤنٹ ہیک کرنا کوئی آسان بات نہیں رہی مگر ہماری کم علمی اب بھی پہلے کی طرح ہے اور اس میں کمی نہیں آئی ہے لہذا ہماری کم علمی سے ہمارا اکاؤنٹ ہیک ہوجائے تو وہ دوسری بات ہے ۔
اس میں کوئی شک نہیں کہ ہیکنگ اب ایک پیشہ بن چکا ہےایک ہیکر کمپیوٹر تک ایک عام یوزر کے ایک معلوم راستے کے علاوہ نودوسرے راستوں اور طریقوں سے پہنچنا جانتا ہے ۔ ویسے ایک مہذب معاشرے میں ہیکنگ کو اچھی نگاہ سے نہیں دیکھا جاتا ہے مگر حقیقت یہ ہے کہ ہرہیکر اور اس کی ہیکنگ بری نہیں بلکہ عام اصطلاح میں ہیکراس شخص کو کہاجاتاہے جو کمپیوٹر پرو گرامنگ میں تجربہ کار ہوتا ہے۔ اسے معلوم ہوتا ہے کہ کس طر ح کس ویب اور کو ڈز کو کنٹرول کرنا ہے ۔کس طر ح کمپیوٹر فنکشن کام کرتے ہیں ۔
ہیکرز کی مختلف اقسام ہیں
وائیٹ ہیٹ ہیکرز

یہ نام ان ہیکرز کو دیا گیا ہے جو مختلف قسم کی ویب سائٹس پر موجود ہمارے اکائونٹس کی سیکورٹی پر قانونی طریقے سے کام کرتے ہیں اور اس کام کے عوض انھیں آن لائن ویب سائٹ کمپنیز کی طرف سے معاوضہ بھی ملتا ہے ۔
بلیک ہیٹ ہیکرز
ہیکنگ کی دنیا میں اس قسم کے ہیکرز کو یہ نام ان کی غلط حرکتوں کی وجہ سے دیا گیا ہے ۔یہ لوگ دوسروں کے سسٹمز میں سے غیر قانونی طور پر ذاتی معلومات چراکر کر اپنے ذاتی مفاد کے لیے استعمال کرتے ہیں۔ عام طور پر اسے بھی ہیکنگ کہاجاتا ہے مگر اصلا اور کمپیوٹر کی اصطلاح میں اسے کریکنگ کہتے ہیں۔ دوسروں کے پاس ورڈ چرانا، ذاتی معلومات اچک لینا، سافٹویرز کے کریکس تیار کرنا وغیرہ۔کریکنگ بھی ہیکنگ کی طرح ہر ایک کے بس کی بات نہیں اس کے لیے بھی ہیکنگ کی طرح کمپیوٹر پروگرامنگ کا گہرا علم ہونا ضروری ہے۔
ان کے علاوہ بھی کچھ قسم کے ہیکرز ہیں جنھیں اس قسم کے نام دیے گئے ہیں جیسے کہ سکرپٹ کیڈیز ، گرین ہیٹ ہیکرز،بلیو ہیٹ ہیکرز،ریڈ ہیٹ ہیکرز اور گرے ہیٹ ہیکرز مگر ہیکرز کی یہ قسم ذکر کردہ دو قسموں کی بیچ بیچ کے ہیں اس لیے ان پر بات نہیں ہوگی ۔
میری کوشش ہوگی کہ اس مضمون میں ہیکنگ سے متعلق تمام تر ضروری چیزیں کھول کر بیان کی جائیں تاکہ کوئی بھی چیز مخفی نہ رہےایک اور بات ذہن نشین رہے کہ ذیل میں بتائے گئے احتیاط سے عام طبقے کی توجہ بلیک میلنگ اور ہیکنگ کی طرف سے ہٹانا مقصود ہے وگرنہ پروفیشنل ہیکرز کے پاس تو سینکڑوں طریقے ہوتے ہیں اور انھیں روکنا ناممکن تو نہیں البتہ قدرے مشکل ضرور ہوتا ہے ۔ لیکن اتنی بات ضرور ہے کہ ذیل میں بتائے گئے احتیاط کے بعد پروفیشنل ہیکرزکے لیے بھی ہیکنگ آسان نہیں رہے گی ۔
انٹرنیٹ پر تقریبا ہر یوزر کی سوشل میڈیا اکاؤنٹس تک رسائی ہوتی ہے اس لیے سب سے پہلے سوشل میڈیا اکاؤنٹس کیسے ہیک ہوتے ہیں اس پر بات کی جائے گی ۔
ایک سوشل میڈیا اکاؤنٹ ہماری دسترس سے سب سے پہلے اس وقت نکلتا ہے جب اس کا پاس ورڈ کسی اور کو معلوم ہوجائے اس کے بعد اس وقت ہماری دسترس سے نکلتا ہے جب کسی کو پاس ورڈ تبدیل کروانے کے ذرائع معلوم ہو۔تیسری دفعہ اس وقت جب کسی کے پاس ہمارے اکاؤنٹ سے متعلق معلومات ہوں
اب پاس ورڈ تو سب کو پتا ہے کہ کیا چیز ہے؟ لیکن پاس ورڈ تبدیل کروانے کے ذرائع کیا ہیں ؟ اور اکاؤنٹ سے متعلق معلومات کیا ہیں ؟یہ شاید زیادہ لوگوں کو معلوم نہ ہوں ۔
پاس ورڈ تبدیل کروانے کے ذرائع میں کسی کے ہاتھ لگنے والا سب سے
پہلاذریعہ آپ کےموبائل فون نمبر کا کسی کے ہاتھ لگنا ہےکسی بھی سوشل میڈیا کے اکاؤنٹس کا پاس ورڈ تبدیل کروانے کے لیے موبائل فون نمبر آسان ذریعہ ہے کسی بھی سوشل میڈیا ایپ یا سائٹ میں (پاس ورڈ بھول گیا ) کے ٹیب پر کلک کریں اور اور موبائل فون نمبر انٹر کریں کچھ ہی دیر میں اسی نمبر پر ملنے والاایک کوڈ کے ذریعے ویریفکیشن ہوتی ہے وہ کوڈ مطلوبہ خانے میں انٹر کریں اور پاس ورڈ چینج کے آپشن میں اپنی مرضی کا پاس ورڈ لگائیں تو اس طرح کسی بھی اکاؤنٹ کو اپنی دسترس میں لایا جاسکتا ہے ۔
دوسرا ذریعہ ہے کسی کاآپ کے کمپیوٹریا موبائل فون کے براؤزر تک رسائی ہونا اس طرح وہ براؤزر میں سے سیو پاس ورڈ دیکھ کر آپ کے سوشل میڈیا اکاؤنٹ کو اپنے کسی کمپیوٹر یا موبائل فون میں آن کرکے اس کا پاس ورڈ چینج کرکے ہیک کرسکتا ہے ۔
تیسرا ذریعہ بھی کمپیوٹر یا موبائل فون تک رسائی کی صورت میں ممکن ہوتا ہے وہ اس طرح کہ ایسے بہت سارے پورٹ ایبل سافٹ وئیر ز اورہیں جو فلیش ڈرائیو یعنی یو ایس بی میں رکھ کر کسی کے کمپیوٹر میں پلگ ان کرکے ایک کلک پر اس کے سارے پاس ورڈ سافٹ وئیر میں سیو کیے جاسکتے ہیں ۔ اورپھر اس کے ذریعے اس کے تمام اکاؤنٹس ہیک کیے جاسکتے ہیں ۔ اور یہی حال موبائل فون کا بھی ہوتا ہے کہ ایسے ایپس موجود ہیں جو آپ کے موبائل فون کے براؤزر میں انٹر پاس ورڈ شو کرواسکتا ہے ۔
چوتھا ذریعہ متبادل ای میل یاریکوری ای میل کسی اور کا استعمال کرنا یا بالکل استعمال نہ کرنا
اور پہلی دفعہ اکاؤنٹ بنانے والے ایسی غلطی کرتے ہیں کہ نیا اکاؤنٹ بناتے وقت متبادل یا ریکوی ای میل میں کسی دوست کا ای میل ٹائپ کرتے ہیں جس کے بعد وہ دوست اسی کے ذریعے اس اکاؤنٹ ریکور کرکے ہیک کرلیتا ہے ۔
پانچواں ذریعہ ہے ہر وقت اور ہر جگہ پر بلو ٹوتھ آن رکھنا
سکیورٹی ماہرین کے مطابق ایسے میل ویئر موجود ہے جو بلو ٹوتھ سے منسلک آلات پر حملہ کر سکتا ہے۔ یہ میل ویئر کسی بھی لنک پر کلک کرنے کے لیے نہیں کہتا ہے بلکہ کسی بھی ایکٹیو بلو ٹوتھ والی ڈیوائس کو قابو میں کرنے کے لیے اسے صرف دس سکینڈ کی ضرورت ہوتی ہے۔اس لیے بلوٹوتھ ہر جگہ آن رکھنے سے اجتناب کریں ۔
چھٹا ذریعہ سوشل میڈیا ایپس جیسے کہ فیس بک ، واٹس ایپ اور ای میلز وغیرہ پرکسی انجان لنک کو اوپن کرنا
جو ممکن ہے ہیکر کی طرف سے بھیجا گیا ہو ۔ عام طور پر جب آپ اسے کھولتے ہیں تو سوشل میڈیا وغیرہ کا صفحہ کھل جاتا ہے۔ اور آپ لاگ اِن ہو جاتے ہیں اور یہیں آپ کا پاس ورڈ ہیکر تک پہنچ جاتا ہے اسے کمپیوٹر کی اصطلاح میں فشنگ کہاجاتا ہے ۔
دراصل آپ جس صفحے پر لاگ اِن ہو رہے ہوتے ہیں وہاں اگر آپ یو آر ایل بار پر غور کریں تو وہ فیس بک یا جی میل کا ایڈریس نہیں ہو گا، بلکہ وہ کوئی سپیم یوآر ایل ہو گا لیکن پیج فیس بک یا جی میل کا ہو گا۔
دراصل اس میں بالکل ایک جیسے ڈیزائن کا صفحہ استعمال کیا جاتا ہے جس سے لوگ بے وقوف بن جاتے ہیں ان کی لاگ اِن ڈیٹیلز چوری ہو جاتی ہیں اور انھیں پتا بھی نہیں چلتا۔ اس مسئلے سے بچنے کے لیے کسی لنک سے کھلنے والے صفحے پر یو آر ایل ضرور غور سے دیکھ لیں۔ یہاں تک کہ ہر طرح کے اطمینان کے بعد اور بھیجنے والے کے واقف کار ہونے اور ان سے تصدیق کے بعد لنک اوپن کریں۔
ساتواں ذریعہ کسی دوسرے کے کمپیوٹر سے اپنےسمارٹ فون کو چارج کرنا
ایک معروف اینٹی وائرس کمپنی کے ماہرین کا کہنا ہے کہ سمارٹ فون جب پی سی سے جڑتا ہے تو دونوں ڈیوائسز کافی ساری اہم معلومات کا تبادلہ کرتی ہیں۔ اس تبادلے میں فون کمپیوٹر کو اپنا نام، کمپنی، ڈیوائس کی قسم، سیریل نمبر، فرم ویئر کی معلومات، آپریٹنگ سسٹم کی تفصیلات، فائل سسٹم اور الیکٹرانک چِپ آئی ڈی جیسی اہم معلومات فراہم کرتا ہے۔
ان تفصیلات میں کمی بیشی ضرور ہو سکتی ہے لیکن سمارٹ فون اپنے بارے میں کمپیوٹر کو بنیادی معلومات دیتا ضرور ہے۔ بظاہر یہ معلومات بے ضرر لگتی ہیں لیکن کمپیوٹر سکیورٹی کمپنی کے مطابق فون کو ہیک کرنے کے لیے اتنی تفصیلات کافی ہوتی ہیں۔
آٹھواں ذریعہ یوٹیوب پر انجان چینل کے ویڈیوز دیکھنا
ماہرین کے مطابق ہیکرز کسی بھی یوٹیوب ویڈیو میں خفیہ آواز کے ذریعے کمانڈز شامل کر سکتے ہیں اور اس کے ذریعے آپ کے کمپیوٹر یا موبائل فون کو ہیک کر سکتے ہیں یہ آواز انسانوں کی سمجھ سے بالاتر ہوتی ہےیہ نمبروں کا کھیل ہے۔
چونکہ آج کل کے سمارٹ فونز میں آواز کی پہچان اور سمارٹ اسسٹنٹ فیچرز شامل کیے گئے ہیں ہیکرز انہیں فیچرز کا ناجائز فائدہ اٹھاکر آپ کا سمارٹ فون ہیک کر سکتے ہیں
نواں ذریعہ کسی انجان سائٹ سے سافٹ وئیرز یا ایپس ڈاؤن لوڈ کرنا
ایپس ڈاؤن لوڈ کرتے وقت صرف آفیشل سائٹ کا استعمال کریں ۔ اورایڈ بلاک ایپ اورانٹی وائرس کا استعمال ضرور کریں۔
دسواں ذریعہ غیر اخلاقی ویڈیوز والی سائٹس پر جانا جس کی کوئی چیکنگ نہیں ہوتی ہے اور یہاں سب سے زیادہ ہیکرز بیٹھے ہوتے ہیں۔
معلومات کے حوالے سے یہ بات ذہن نشین رہے کہ سیکیورٹی کوئسچن ایسا ہونا چاہیے کہ وہ آپ کے کسی دوست کو معلوم نہ ہو کسی بھی ای میل اکاؤنٹ کے ہیک ہونے میں سیکیورٹی کوئسچن کا بہت بڑا ہاتھ ہوتا ہے۔ انٹرنیٹ کی معمولی سدھ بدھ رکھنے والے ایک عام یوزر کو بھی اگر یہ پتا چل جائے کہ فلاں کا سیکورٹی کوئسچن کیا ہے تو اس کے لیے ای میل ہیک کرنا مسئلہ نہیں ہے ۔اس لیے اگر سیکورٹی کوئسچن میں پسندیدہ ٹیچر سلیکٹ کیا ہے تو اس میں اپنے پسندیدہ ٹیچر کے بجائے کسی اور کا نام لکھ دیں تاکہ اگر آپ کی زبان سے کبھی کسی نے پسندیدہ ٹیچر کانام سنا بھی ہو تو بھی اسے ای میل ہیک کرنے میں استعمال نہ کرسکے ۔
ایک کمپیوٹر اصطلاح ہے شولڈر سرفنگ
اس کا مطلب کسی شخص کے پیچھے کھڑے ہوکر اس کے کی بورڈ پر نظر رکھتے ہوئے اس کا پاسورڈ حاصل کرنا ہے۔ یہ ہیکنگ کی بہت پرانی تکنیک ہے۔ اس لیے ہمیشہ اے ٹی ایم، سائبر کیفے، ایئرپورٹ یا دیگر مقامات پر اپنا پاسورڈ درج کرنے سے قبل دیکھ لیں کہ کوئی آپ پر نظر تو نہیں رکھا ہوا یا کسی کیمرے کی نظر تو نہیں ہے آپ پر
کچھ ایسے کمپیوٹر پروگرامز ہیں جو انجان سائٹس سے کچھ ڈاؤن لوڈ کرنے کی صورت میں آپ کے کمپیوٹر میں انسٹال ہوسکتے ہیں جیسا کہ "کی لاگرز" اگر یہ آپ کے کمپیوٹرمیں انسٹال ہوجائیں تو پھر آپ جو بھی کی بورڈ کے ذریعے ٹائپ کریں گے وہ ہیکرز کو اپنے کمپیوٹر پر نظر آئے گا ۔ ان سے بچنے کا بہترین طریقہ آن لائن ورچوئل کی بورڈ کا استعمال ہے۔
کسی بھی ویب براؤزر پر ماسٹر پاس ورڈ نہ لگانا اور اس براؤزر میں پاس ورڈ سیو کرنا بھی ہیکر کو دعوت ہیکنگ دینی ہے ۔
جاری ہے
 

PakArt UrduLover

in memoriam 1961-2020، May his soul rest in peace
Charismatic
Designer
Expert
Writer
Popular
Persistent Person
ITD Supporter
ITD Observer
ITD Solo Person
ITD Fan Fictionest
ITD Well Wishir
ITD Intrinsic Person
Joined
May 9, 2018
Local time
5:24 PM
Threads
1,353
Messages
7,658
Reaction score
6,974
Points
1,508
Location
Manchester U.K
Gold Coins
124.01
Get Unlimited Tags / Banners
Promotion from VIP to ITD Star.
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Thread Highlight Unlimited
Thread Highlight Unlimited

Doctor

⭐⭐⭐⭐⭐⭐
Charismatic
Designer
Expert
Writer
Popular
King of Alkamunia
Proud Pakistani
🏆 ZH Top Poster in a Month Award 🕖
الکمونیا میں تو ایسا نہیں ہوتا
Top Poster
ITD Developer
Joined
Apr 25, 2018
Local time
9:24 PM
Threads
905
Messages
14,019
Reaction score
15,255
Points
1,977
Age
47
Location
Rawalpindi
Gold Coins
4,134.00
Get Unlimited Tags / Banners
Permanently Change Username Color & Style.
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Thread Highlight Unlimited
Change Username Style.
Top
AdBlock Detected

We get it, advertisements are annoying!

Sure, ad-blocking software does a great job at blocking ads, but it also blocks useful features of our website. For the best site experience please disable your AdBlocker.

I've Disabled AdBlock    No Thanks