پہلوانی

Bail Gari

Thread Starter
Joined
May 9, 2018
Local time
3:14 AM
Threads
28
Messages
204
Reaction score
195
Points
39
Location
Pakistan
Gold Coins
8.00
اے حمید

پہلوانی اور پہلوان لاہور کی ثقافت کا اہم حصہ ہیں۔ لاہور نے بڑے بڑے شہ زور اور نامور پہلوان پیدا کیے ہیں۔ رستم زماں گاماں پہلوان، رستم ہند امام بخش پہلوان، حمیدا پہلوان، لالہ راج پہلوان، کالا پہلوان، بھولو پہلوان، غوث پہلوان، بلا پہلوان، چابک سوار کالا پہلوان شیش گر، اکا پہلوان، اچھا پہلوان وغیرہ۔ رستم زماں گاماں پہلوان نے جرمن پہلوان زبسکو کو تین منٹ میں چت گرا کر ساری دنیا میں پاکستان کا نام روشن کیا۔ جب کوئی پہلوان کشتی لڑنے کے واسطے اکھاڑے میں اترتا ہے تو سب سے پہلے اکھاڑے کے کنارے بیٹھے ہوئے بزرگ سے بلند آواز میں اجازت طلب کرتا ہے۔ وہ اکھاڑے کی مٹی اس کے بدن پر پھینک کر کہتا ہے۔ ’’حکم اللہ دا۔‘‘ لاہور کے مشہور دنگل ہمیشہ سے منٹو پارک میں ہوتے تھے۔ ان دنگلوں کے بڑے بڑے رنگین پوسٹر چھاپے جاتے۔ پوسٹر کی دونوں جانب کشتی لڑنے والے پہلوانوں کا خاکہ بنا ہوتا تھا جس میں انہوں نے گرز اپنے کندھوں پر رکھے ہوتے تھے۔ کسی دنگل کا نام ’’شاہی دنگل‘‘ تو کسی کا ’’کانٹے دار دنگل‘‘ یا ’’پوپٹ دنگل‘‘ ہوتا تھا۔ دنگل سے ایک روز قبل دنگل کے منصف (جج) اور ٹھیکیدار کی سرپرستی میں پہلوانوں کا جلوس نکالا جاتا۔ بڑے جوڑ کے پہلوان آگے تانگوں میں بنارسی، کیسری رنگ کی پگڑیاں باندھے بیٹھے ہوتے۔ ان کے پیچھے چھوٹے جوڑ کے پہلوانوں کے تانگے ہوتے تھے۔ جلوس کے آگے بینڈ باجا ہوتا جو فلمی دھنیں بجاتا جلوس کے ساتھ چلتا تھا۔ لوگ سڑک کی دونوں جانب کھڑے ہو کر اپنے اپنے پسندیدہ پہلوانوں کے حق میں نعرے لگاتے۔ اگلے تانگے پر منادی کرنے والا بیٹھا سر ہلا ہلا کر ڈھول کی تال پر ٹلی بجا رہا ہوتا۔ پہلوان کے مداح پہلوانوں پر پھول کے ہار اور پھولوں کی پتیاں نچھاور کرتے۔ ہر چوک میں پہنچ کر منادی کرنے والا ٹلی والا ہاتھ اوپر اٹھا کر جلوس کو رکنے کا اشارہ کرتا اور پھر تانگے میں کھڑے ہو کر اعلان کرتا۔ ’’سجنو! تے مہربانو! تے جنابِ والا! داتا کی نگری اور آپ کے شہر لاہور کے اندر کل ایک کانٹے دار پوپٹ دنگل ہو رہا ہے۔ اس دنگل میں اچھا گوجرانوالیہ اور مست ہاتھی اکبر پہلوان میں بڑا جوڑ ہو گا۔ ہوائی جہاز پہلوان تے راکٹ پہلوان کی ہتھ جوڑی ہو گی۔ منصف کا فیصلہ آخری ہوگا۔ دنگل میں گڑبڑ کرنے والا حوالہ پولیس ہو گا۔ برائے مہربانی مفت خورے تشریف نہ لائیں۔‘‘ نورا اس کشتی کو کہتے تھے جس میں دونوں بڑے پہلوان کشتی لڑتے لڑتے تھک کر چور ہو جاتے مگر کوئی فیصلہ نہ ہوتا تھا۔ چنانچہ منصف کشتی کو برابر چھڑوا دیتے تھے۔ بعد میں ایسی کشتی ہی کو نورا کہا جانے لگا جس میں نمائشی اور غیر معروف پہلوان پہلے سے فیصلے کر لیتے تھے کہ کس نے چاروں شانے چت گرنا ہے۔ (تلخیص شدہ)

 

PakArt UrduLover

in memoriam 1961-2020، May his soul rest in peace
Charismatic
Designer
Expert
Writer
Popular
ITD Observer
ITD Solo Person
ITD Fan Fictionest
ITD Well Wishir
ITD Intrinsic Person
Persistent Person
ITD Supporter
Top Threads Starter
Joined
May 9, 2018
Local time
10:14 PM
Threads
1,354
Messages
7,659
Reaction score
6,966
Points
1,508
Location
Manchester U.K
Gold Coins
117.28
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Thread Highlight Unlimited
Thread Highlight Unlimited

Abu Dujana

⭐⭐⭐⭐⭐⭐
Charismatic
Expert
Popular
Helping Hands
Joined
Apr 25, 2018
Local time
3:14 AM
Threads
81
Messages
968
Reaction score
1,366
Points
452
Location
Karachi, Pakistan
Gold Coins
516.01
زبردست معلومات۔
اچھا نورا کشتی کا مطلب ابھی سمجھ آیا۔
اس کا مطلب ہے کہ ریسلنگ تو پھر ساری نورا کشتی ہوئی۔
:p
 
Top
AdBlock Detected

We get it, advertisements are annoying!

Sure, ad-blocking software does a great job at blocking ads, but it also blocks useful features of our website. For the best site experience please disable your AdBlocker.

I've Disabled AdBlock    No Thanks