چھ ستمبر 1965

ناعمہ وقار

Thread Starter
⭐⭐⭐⭐⭐⭐
Staff member
Charismatic
Champion
Writer
Popular
Mysterious
Joined
May 8, 2018
Local time
12:52 PM
Threads
111
Messages
3,180
Reaction score
4,661
Points
943
Location
The City of Containers
Gold Coins
865.83
Permanently Change Username Color & Style.
Get Unlimited Tags / Banners
Single Thread Highlight for 1 Week.
Thread Highlight Unlimited
چھ ستمبر 1965
**********
آج بھی یاد ہے چھ ستمبر کی بات
اِک پڑوسی کا فعل، اِک ستم گر کی بات
جارحانہ عزائم تھے اُس کے مگر
ہوگئے ہم بھی اس طرح سینہ سپر
عرصۂ جنگ میں جان کب جان تھی؟
عشق تھا سربکف، عقل حیران تھی
قوم تھی متحد، عزم بیدار تھا
جس کو دیکھو وہ مرنے کو تیار تھا
حملۂ دشمناں تازیانہ بنا
جان پر کھیلنے کا بہانا بنا
توپ، ٹینک اور گولےکھلونے سے تھے
دیوہیکل تھے ہم اور وہ بونے سے تھے
قوم شوق و جنونِ شہادت لئے
فوج کےہم سفر تھی محبت لئے
ایسے مربوط تھے اپنے پیر و جواں
ایک مکُے میں جیسےہوں پانچ انگلیاں
دل میں ارمان تھا جان دے دیں مگر
آنچ آنے نہ دیں ملک کی آن پر
پھر تو دنیا نے دیکھا کہ ایسا ہوا
خود تماشا گروں کا تماشا ہوا
جنگ روکو! یہ دشمن کی فریاد تھی
آہ انکی ہمارے لئے داد تھی
چھ ستمبر سے ہم کو سبق یہ ملا
ہو ستم گر سے کچھ بھی نہ شکوہ گلہ
قوم پوری کی پوری اگر ایک ہو
رنگ سے نسل سے بے خبر، نیک ہو
اسلحے کو وہ زیور سمجھنے لگے
موت کو زندگی گر سمجھنے لگے
نصرتِ حق اُدھر چشمِ نم چوم لے
فتح بڑھ کر ادھر خود قدم چوم لے
 
Top
AdBlock Detected

We get it, advertisements are annoying!

Sure, ad-blocking software does a great job at blocking ads, but it also blocks useful features of our website. For the best site experience please disable your AdBlocker.

I've Disabled AdBlock    No Thanks