شاعر:میرے ہی لہو پر گزر اوقات کرو ہوکلیم عاجز

PakArt UrduLover

Thread Starter
Staff member
★★★★★★
Most Valuable
Top Threads Starter
Most Popular
Persistent Person
Writer
Most Helpful
Expert
ITD Express
ITD Supporter
Designer
Dynamic Birgade
Joined
May 9, 2018
Messages
5,006
Reaction score
4,300
Points
2,604
Location
Manchester U.K
Gold Coins
253.94
Silver Coins
23,754
Diamonds
1.01220
Get Unlimited Tags / Banners
Thread Highlight Unlimited
Permanently Change Username Color & Style.

PakArt UrduLover

Thread Starter
Staff member
★★★★★★
Most Valuable
Top Threads Starter
Most Popular
Persistent Person
Writer
Most Helpful
Expert
ITD Express
ITD Supporter
Designer
Dynamic Birgade
Joined
May 9, 2018
Messages
5,006
Reaction score
4,300
Points
2,604
Location
Manchester U.K
Gold Coins
253.94
Silver Coins
23,754
Diamonds
1.01220
Get Unlimited Tags / Banners
Thread Highlight Unlimited
Permanently Change Username Color & Style.
ھندوستانی وزیراعظم اندرا گاندھی نے 1975 میں ایمرجنسی لگا دی تھی ۔ اکیس مہینے کی اس ہنگامی حالت میں انسانی حقوق پامال کیے گئے ۔ اپوزیشن رہنماؤں کو جیل بھیجا گیا اور پریس کو پابندیوں کا سامنا کرنا پڑا ۔ ان حالات میں پندرہ اگست کو نئی دلی کے لال قلعے میں تقریب ہوئی ۔ وزیر اعظم اس مشاعرے میں موجود تھیں۔ کلیم عاجز نے اس مشاعرے میں اندرا گاندھی کی طرف اشارہ کر کے یہ شعر (دامن پہ کوئی چھینٹ نہ خنجر پہ کوئی داغ......... تم قتل کرو ہو کہ کرامات کرو ہو) پڑھا۔ شعر پر بہت داد ملی ،لیکن مشاعرہ کے منتظمین کا خون خشک ہوگیا ۔​

میرے ہی لہو پر گزر اوقات کرو ہو
مجھ سے ہی امیروں کی طرح بات کرو ہو
دن ایک ستم ایک ستم رات کرو ہو
وہ دوست ہو دشمن کو بھی تم مات کرو ہو
ہم خاک نشیں تم سخن آرائے سر بام
پاس آ کے ملو دور سے کیا بات کرو ہو
ہم کو جو ملا ہے وہ تمہیں سے تو ملا ہے
ہم اور بھلا دیں تمہیں کیا بات کرو ہو
یوں تو کبھی منہ پھیر کے دیکھو بھی نہیں ہو
جب وقت پڑے ہے تو مدارات کرو ہو
دامن پہ کوئی چھینٹ نہ خنجر پہ کوئی داغ
تم قتل کرو ہو کہ کرامات کرو ہو
بکنے بھی دو عاجزؔ کو جو بولے ہے بکے ہے
دیوانہ ہے دیوانے سے کیا بات کرو ہو

 
Top