ڈاکٹر بھائی کو ایک کوے کا مشورہ

صبیح

Thread Starter
★★★☆☆☆
Dynamic Brigade
Writer
Joined
May 5, 2018
Messages
1,880
Reaction score
2,329
Points
620
Location
Central
ایک دفعہ کا ذکر ہے کہ ڈاکٹر بھائی بڑے سے پتھر پر بیٹھے ہوئے ندی کے صاف شفاف پانی میں پتھر پھینک رہے تھے کہ اچانک ایک پتھر آکر انہیں جا لگا تو حیرت سے آنکھیں کھول کر دیکھنے لگے،کہ پتھرکہاں سے اور کیوں آیا۔
ڈاکٹر بھائی نے سوچاکہ شاید کسی پیاسے کوے کو گھڑے میں پانی نظر آیاہوگا

جو اس قدر نیچے ہوگا کہ وہ اپنی چونچ میں پتھر چن کر اس میں ڈال رہا اور شاید یہی وہ پتھر ہے جو اس کی چونچ سے نکل کر اسے آلگا ہے۔



لیکن پھر انہوں نے اپنے زریں خیال کی نفی کرتے ہوئے سوچا کہ پانی تو ندی میں بھی ہے جو کوا باآسانی پی سکتا ہے۔۔۔۔کوئی وجہ نہ جان کر انہوں نے ایک اور پتھر ندی میں پھینکا ۔۔۔تھوڑی دیر بعد پتھرانہیں واپس آکر لگا تو اس بار ڈاکٹر بھائی پتھر پر کھڑے ہوکر ادھر ادھر دیکھنے لگے۔۔۔
کوئی ہے؟۔۔۔۔کون ہے؟۔۔۔اونچی آوازیں نکال کر انتظار کرنے لگے کہ کوئی باہر نکل آئے گا۔۔


۔اور تھوڑی دیر بعد ندی سے ایک مینڈک باہر نکل کر کہنے لگا۔۔۔کیوں تنگ کررہے ہو؟




ڈاکٹر بھائی نے کہا ابے ڈڈو۔۔۔میں تو کسی کو تنگ نہیں کررہا؟
مینڈک نے کہا،کیوں نہیں تم ہمیں تنگ کررہے ہو ؟
ڈاکٹر بھائی نے حیرت سے ۔۔۔کیوں وہ کیسے؟
مینڈک،پتھر ندی میں پھینک رہے ہو ،کیا نیچے کوئی بیری کا درخت ہے ؟
ابےڈڈو۔۔۔ڈاکٹر بھائی نے کہا،جا تنگ نہ کرمیں تو خود پریشان ہوں کہ مجھے پتھر کون مار رہاہے۔۔

مینڈک۔۔۔ہی ہی ہی۔۔ہنستے ہوئے۔


۔۔پتھر کے جواب میں پھول نہیں آئے گا،۔۔اب اگر پتھر پھینکا تو ہمارے جوان تیار بیٹھے ہیں، بیک وقت کئی پتھر آئیں گے۔۔مینڈک نے غراتے ہوئے کہا ۔۔۔توڈاکٹر بھائی اس کےلہجے کی سختی سے سو چنے لگے کہ وہ دو مرتبہ پتھرکھا چکا ہے، لہذا ڈڈو کی بات میں وزن ہے۔

کہیں پہاڑوں پہ موسلہ دھار بارش ہوئی تو اس کا سیلابی ریلہ بڑی تیزی سے اسی جانب بڑھتا ہوا آرہاتھا،ایک کوے نے ڈاکٹر بھائی کو اطلاع دی کہ پیچھے سے خطرہ آرہاہے لہذا آپ یہاں سے اٹھ کر محفوظ جگہ پر چلے جائیں۔

 

Naima

Staff member
★★★★☆☆
Contest Winner
Dynamic Brigade
Joined
May 8, 2018
Messages
1,720
Reaction score
1,729
Points
407
Location
الکمونیا - اسلام آباد
:think:
:unsure:
 

faizyG

☆☆☆☆☆☆
Joined
May 18, 2019
Messages
53
Reaction score
49
Points
13
ایک دفعہ کا ذکر ہے کہ ڈاکٹر بھائی بڑے سے پتھر پر بیٹھے ہوئے ندی کے صاف شفاف پانی میں پتھر پھینک رہے تھے کہ اچانک ایک پتھر آکر انہیں جا لگا تو حیرت سے آنکھیں کھول کر دیکھنے لگے،کہ پتھرکہاں سے اور کیوں آیا۔
ڈاکٹر بھائی نے سوچاکہ شاید کسی پیاسے کوے کو گھڑے میں پانی نظر آیاہوگا

جو اس قدر نیچے ہوگا کہ وہ اپنی چونچ میں پتھر چن کر اس میں ڈال رہا اور شاید یہی وہ پتھر ہے جو اس کی چونچ سے نکل کر اسے آلگا ہے۔



لیکن پھر انہوں نے اپنے زریں خیال کی نفی کرتے ہوئے سوچا کہ پانی تو ندی میں بھی ہے جو کوا باآسانی پی سکتا ہے۔۔۔۔کوئی وجہ نہ جان کر انہوں نے ایک اور پتھر ندی میں پھینکا ۔۔۔تھوڑی دیر بعد پتھرانہیں واپس آکر لگا تو اس بار ڈاکٹر بھائی پتھر پر کھڑے ہوکر ادھر ادھر دیکھنے لگے۔۔۔
کوئی ہے؟۔۔۔۔کون ہے؟۔۔۔اونچی آوازیں نکال کر انتظار کرنے لگے کہ کوئی باہر نکل آئے گا۔۔


۔اور تھوڑی دیر بعد ندی سے ایک مینڈک باہر نکل کر کہنے لگا۔۔۔کیوں تنگ کررہے ہو؟




ڈاکٹر بھائی نے کہا ابے ڈڈو۔۔۔میں تو کسی کو تنگ نہیں کررہا؟
مینڈک نے کہا،کیوں نہیں تم ہمیں تنگ کررہے ہو ؟
ڈاکٹر بھائی نے حیرت سے ۔۔۔کیوں وہ کیسے؟
مینڈک،پتھر ندی میں پھینک رہے ہو ،کیا نیچے کوئی بیری کا درخت ہے ؟
ابےڈڈو۔۔۔ڈاکٹر بھائی نے کہا،جا تنگ نہ کرمیں تو خود پریشان ہوں کہ مجھے پتھر کون مار رہاہے۔۔

مینڈک۔۔۔ہی ہی ہی۔۔ہنستے ہوئے۔


۔۔پتھر کے جواب میں پھول نہیں آئے گا،۔۔اب اگر پتھر پھینکا تو ہمارے جوان تیار بیٹھے ہیں، بیک وقت کئی پتھر آئیں گے۔۔مینڈک نے غراتے ہوئے کہا ۔۔۔توڈاکٹر بھائی اس کےلہجے کی سختی سے سو چنے لگے کہ وہ دو مرتبہ پتھرکھا چکا ہے، لہذا ڈڈو کی بات میں وزن ہے۔

کہیں پہاڑوں پہ موسلہ دھار بارش ہوئی تو اس کا سیلابی ریلہ بڑی تیزی سے اسی جانب بڑھتا ہوا آرہاتھا،ایک کوے نے ڈاکٹر بھائی کو اطلاع دی کہ پیچھے سے خطرہ آرہاہے لہذا آپ یہاں سے اٹھ کر محفوظ جگہ پر چلے جائیں۔

ڈاکٹر صاحب القمونیا میں تو ایسا نہیں ہوتا کہ کوا پتھر گھڑے میں اس نیت سے پھینکے کہ پانی اوپر آنے پر اپنی تشنگی کی شدت کو کم کرنے کے لئے چند گھونٹ نوش فرمائے گا۔اور لامحالہ اگر وہ ایسی چالاکی دکھاتا بھی ہے تو پتھر کا کیا کام کہ وہ گھڑے میں گرنے کی بجائے ندیا میں رہائش پذیر معصوم ڈڈوؤں کی بستی میں جا گرے اور ان کے آرام میں مخل ہوجائے۔تحقیق تو اس بات کی بھی متقاضی ہے کہ آخر ڈاکٹر صاحب وہاں اس پتھر پر بیٹھے کر کیا رہے تھے۔اور ان کو پریشان کیا لاحق تھی کہ انہیں مینڈکوں کے ظالم پتھروں کا نشانہ بننا پڑا۔
پھر ایک کوئے کو کیا پڑی تھی کہ وہاں نیوز چینل کھول کر موسم کی خبریں نشر کرتا پھرے اور آنے والے سیلابی ریلے سے ڈاکٹر صاحب کے علم ناقص میں اضافہ کی کوشش کرے۔مزید یہ کہ کہانی میں یہ تو معلوم ہی نہ ہو سکا کہ کیا کوئے کی اس خطرناک خبر کے رد عمل میں ڈاکٹر صاحب نے کیا کاروائی کی ۔کیا وہ ڈڈوؤں کی پتھروں کی بارش کا مسلسل شکار رہے۔ سیلابی ریلے میں بہ گئے یا سیانے کوئے کی بات مان کر کسی محفوظ مقام کی طرف سدھار گئے۔پوری کہانی سے مطلع فرمائیں۔شکریہ
 

Doctor

★★★★★★
Most Valuable
Most Popular
Top Poster
Dynamic Brigade
Developer
Expert
Writer
Joined
Apr 25, 2018
Messages
4,143
Reaction score
4,831
Points
1,614
Location
Rawalpindi - Punjab - Pakistan
ڈاکٹر صاحب القمونیا میں تو ایسا نہیں ہوتا کہ کوا پتھر گھڑے میں اس نیت سے پھینکے کہ پانی اوپر آنے پر اپنی تشنگی کی شدت کو کم کرنے کے لئے چند گھونٹ نوش فرمائے گا۔اور لامحالہ اگر وہ ایسی چالاکی دکھاتا بھی ہے تو پتھر کا کیا کام کہ وہ گھڑے میں گرنے کی بجائے ندیا میں رہائش پذیر معصوم ڈڈوؤں کی بستی میں جا گرے اور ان کے آرام میں مخل ہوجائے۔تحقیق تو اس بات کی بھی متقاضی ہے کہ آخر ڈاکٹر صاحب وہاں اس پتھر پر بیٹھے کر کیا رہے تھے۔اور ان کو پریشان کیا لاحق تھی کہ انہیں مینڈکوں کے ظالم پتھروں کا نشانہ بننا پڑا۔
پھر ایک کوئے کو کیا پڑی تھی کہ وہاں نیوز چینل کھول کر موسم کی خبریں نشر کرتا پھرے اور آنے والے سیلابی ریلے سے ڈاکٹر صاحب کے علم ناقص میں اضافہ کی کوشش کرے۔مزید یہ کہ کہانی میں یہ تو معلوم ہی نہ ہو سکا کہ کیا کوئے کی اس خطرناک خبر کے رد عمل میں ڈاکٹر صاحب نے کیا کاروائی کی ۔کیا وہ ڈڈوؤں کی پتھروں کی بارش کا مسلسل شکار رہے۔ سیلابی ریلے میں بہ گئے یا سیانے کوئے کی بات مان کر کسی محفوظ مقام کی طرف سدھار گئے۔پوری کہانی سے مطلع فرمائیں۔شکریہ
اصل میں جب سے الکمونیا کے کوے صبیح بھائی سے بعیت ہوئے ہیں وہ بھی اب بے سروپا حرکتیں کرنے لگے ہیں ، آخر کو پیر و مرشد کے اثرات بھی تو ظاہر ہونے ہیں، تو یہ ساری فلم اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے۔
:smajh-kar:
 

Doctor

★★★★★★
Most Valuable
Most Popular
Top Poster
Dynamic Brigade
Developer
Expert
Writer
Joined
Apr 25, 2018
Messages
4,143
Reaction score
4,831
Points
1,614
Location
Rawalpindi - Punjab - Pakistan
الکمونیا کے اندر کا منظر تھا کہ ڈاکٹر بھائی وہاں کیا کرتے پھرتے رہتے ہیں۔
:D
اندر کا منظر تو وہ تھا جب آپ نے پانی سے باہر آکر سنگین نتائج بھگتنے کی دھمکی دی تھی۔
:pagal::pagal::pagal::pagal::pagal:
 

Naima

Staff member
★★★★☆☆
Contest Winner
Dynamic Brigade
Joined
May 8, 2018
Messages
1,720
Reaction score
1,729
Points
407
Location
الکمونیا - اسلام آباد
الکمونیا کے اندر کا منظر تھا کہ ڈاکٹر بھائی وہاں کیا کرتے پھرتے رہتے ہیں۔
:D
لیکن آپ ندی میں کیا کر رہے تھے؟
:think:
 

Doctor

★★★★★★
Most Valuable
Most Popular
Top Poster
Dynamic Brigade
Developer
Expert
Writer
Joined
Apr 25, 2018
Messages
4,143
Reaction score
4,831
Points
1,614
Location
Rawalpindi - Punjab - Pakistan
لیکن آپ ندی میں کیا کر رہے تھے؟
:think:
الکمونیا میں ہونے والے الیکشن میں صبیح بھائی کا انتخابی نشان ڈڈو ہے اس لئے صبیح بھائی ڈڈو کا روپ دھار کر مینڈکوں کے ووٹ مانگنے وہاں گئے ہوئے تھے کہ یہ سانحہ رونما ہوا
:pagal::pagal::pagal::pagal::pagal::pagal::pagal:
 

Naima

Staff member
★★★★☆☆
Contest Winner
Dynamic Brigade
Joined
May 8, 2018
Messages
1,720
Reaction score
1,729
Points
407
Location
الکمونیا - اسلام آباد
الکمونیا میں ہونے والے الیکشن میں صبیح بھائی کا انتخابی نشان ڈڈو ہے اس لئے صبیح بھائی ڈڈو کا روپ دھار کر مینڈکوں کے ووٹ مانگنے وہاں گئے ہوئے تھے کہ یہ سانحہ رونما ہوا
:pagal::pagal::pagal::pagal::pagal::pagal::pagal:
الکمونیا ےالیکشن ہو رہے ہیں؟
یہ بات ہمارے علم میں کیوں نہیں ہے؟
:think:
ویسے بیسٹ آف لک صبیح بھائی
لک میں ل پر زبر ہے پیش مت پڑھیئے گا
:pagal::pagal::pagal::pagal::pagal::pagal:
 

Doctor

★★★★★★
Most Valuable
Most Popular
Top Poster
Dynamic Brigade
Developer
Expert
Writer
Joined
Apr 25, 2018
Messages
4,143
Reaction score
4,831
Points
1,614
Location
Rawalpindi - Punjab - Pakistan
الکمونیا ےالیکشن ہو رہے ہیں؟
اصل میں عام انتخابات نہیں ہیں بلکہ لومڑوں کی مخصوص نشست پر سابقہ امیدوار کے لاپتہ ہوجانے کی وجہ سے خالی ہونے والی نشست پر صبیح بھائی نے کاغذات جمع کروائے ہیں اور الیکٹرل پول میں الکمونیا کے طلسماتی جنگل کے مینڈک بہت بڑی تعداد میں شامل ہیں
اس لئے صبیح بھائی آج کل موسم کا حال بتانے والے کوے کو لے کر وہاں گھومتے رہتے ہیں کبھی مینڈک بن کر تالاب میں اتر جاتے ہیں اور جب تک مینڈک دھکے دے دے کر انہیں نکال باہر نہ کریں واپس نہیں آتے
:pagal::pagal::pagal::pagal::pagal::pagal::pagal::pagal::pagal:
:lol::lol::lol::lol::lol::lol::lol:
 

PakArt UrduLover

Staff member
★★★★☆☆
Dynamic Brigade
ITD Express
Designer
Writer
Joined
May 9, 2018
Messages
3,647
Reaction score
2,911
Points
930
Location
Manchester U.K
معاملہ دراصل کچھ ایسا ہے۔
"3 دوست تهے"
"کوا+طوطا+ڈڈو"

کوا=بی ایس سی میں پڑھ رھا هے.
kawa 2.jpg
طوطا= ایم اے میں پڑھ رھا هے.
250px-Polytelis_alexandrae_-6.jpg
اور ڈڈو میسج پڑھ رھا هے..
312066810_cd8f59ae54_b.jpg
طوطا بھائی بہت اداس ہے۔عید کے دن اکیلے ہیں
میئنا [بہنا]جی سےاپیل ہے واپس لوٹ آیئں

*****
ها ها ها ها ها..
 

Doctor

★★★★★★
Most Valuable
Most Popular
Top Poster
Dynamic Brigade
Developer
Expert
Writer
Joined
Apr 25, 2018
Messages
4,143
Reaction score
4,831
Points
1,614
Location
Rawalpindi - Punjab - Pakistan
ہاہاہاہا زاہد انکل نے یہ پوسٹ اس وقت ترتیب دی تھی جب صبیح بھائی مینڈکوں سے ووٹ مانگنے کے لیے چھپڑ میں اترے ہوئے تھے۔
:10xbvw3:
 

PakArt UrduLover

Staff member
★★★★☆☆
Dynamic Brigade
ITD Express
Designer
Writer
Joined
May 9, 2018
Messages
3,647
Reaction score
2,911
Points
930
Location
Manchester U.K
ہاہاہاہا زاہد انکل نے یہ پوسٹ اس وقت ترتیب دی تھی جب صبیح بھائی مینڈکوں سے ووٹ مانگنے کے لیے چھپڑ میں اترے ہوئے تھے۔
:10xbvw3:
چھپڑ بھی کمال دلدلی بڑا سا پونڈ ہوتا ہے جس میں سنگھاڑے بھی جنم لیتے ہیں۔حکیم اسکے بہت نسخے بناتے ہیں اور ڈڈو آجکل سی پیک پر چایئنی روسٹ کرکے کھارہے ہیں۔ان حالات میں ڈڈو ووٹنگ کم ہو جانی ہے۔اور الیکشن میں ھارنے کے چانسز کم ہیں۔کوئی ڈیئل کرلیں۔مخالف پارٹی کو گورنر بناکر خود وزیر بن جایئں۔اور ایک جاودائی پھونک مرواکر پاور میں آ جایئیے​
 

صبیح

Thread Starter
★★★☆☆☆
Dynamic Brigade
Writer
Joined
May 5, 2018
Messages
1,880
Reaction score
2,329
Points
620
Location
Central
ڈاکٹر صاحب القمونیا میں تو ایسا نہیں ہوتا کہ کوا پتھر گھڑے میں اس نیت سے پھینکے کہ پانی اوپر آنے پر اپنی تشنگی کی شدت کو کم کرنے کے لئے چند گھونٹ نوش فرمائے گا۔اور لامحالہ اگر وہ ایسی چالاکی دکھاتا بھی ہے تو پتھر کا کیا کام کہ وہ گھڑے میں گرنے کی بجائے ندیا میں رہائش پذیر معصوم ڈڈوؤں کی بستی میں جا گرے اور ان کے آرام میں مخل ہوجائے۔تحقیق تو اس بات کی بھی متقاضی ہے کہ آخر ڈاکٹر صاحب وہاں اس پتھر پر بیٹھے کر کیا رہے تھے۔اور ان کو پریشان کیا لاحق تھی کہ انہیں مینڈکوں کے ظالم پتھروں کا نشانہ بننا پڑا۔
پھر ایک کوئے کو کیا پڑی تھی کہ وہاں نیوز چینل کھول کر موسم کی خبریں نشر کرتا پھرے اور آنے والے سیلابی ریلے سے ڈاکٹر صاحب کے علم ناقص میں اضافہ کی کوشش کرے۔مزید یہ کہ کہانی میں یہ تو معلوم ہی نہ ہو سکا کہ کیا کوئے کی اس خطرناک خبر کے رد عمل میں ڈاکٹر صاحب نے کیا کاروائی کی ۔کیا وہ ڈڈوؤں کی پتھروں کی بارش کا مسلسل شکار رہے۔ سیلابی ریلے میں بہ گئے یا سیانے کوئے کی بات مان کر کسی محفوظ مقام کی طرف سدھار گئے۔پوری کہانی سے مطلع فرمائیں۔شکریہ
:D
آپ نے بڑا زبردست تجزیہ کیا ہے۔
یہ کوے کی پیاس اور پتھر والی سوچ ڈاکٹر بھائی کا ذہنی ڈیفنس تھا، ان کا ذہن ایسا ہے کہ عین خطرے کے وقت بھی دماغ انہیں ایک ایسی سوچ دیتاہے کہ کوئی خطرہ نہیں اور خطرے کو سیدھا خطرہ نہیں کہتا بلکہ کوئی سوچ "گھڑ"کران کے دماغ شریف میں سمو جاتی ہے جیسا کہ ندی کنارے کوے کی پیاس ۔۔۔پتھر کا چونچ سے گرنا۔
بڑی دور سے کوڑی لے آنا لیجانا (امپورٹ ایکسپورٹ) ڈاکٹر بھائی کے ذہن کی کارستانیاں ہیں۔
مینڈک والا قصہ بھی عجیب ہےکہ اخترسائیں ملنگ چکی تائی آنکھوں میں پانی والی عینک لگائے ندی کے اندر سے تپھر کھا کر برآمد ہوئے تو ڈاکٹر بھائی انہیں ڈوڈو سمجھ بیٹھے۔سائیں اختر جڑی بوٹیاں ندی کے اندر سے ناعمہ سسٹر اورخود ڈاکٹر بھائی کے علاج کے لیے تلاش کررہے تھے جو کھجل سائیں کو بغرض علاج چلہ کشی کے ذریعے سے "اشارہ"ہوا تھا کہ قیمتی جڑی بوٹیاں دونوں پراپیگنڈا ماسٹروں کو دودھ میں گھول کر پلانی ہے تاکہ دماغ کے اندر سے پراپیگنڈے نکل کر صاف ہوجائیں۔
:pagal:
@ناعمہ وقار @Doctor

ڈاکٹر بھائی جس پریشانی میں مبتلا اس پتھر پر بیٹھے ہوئے تھے یہ بھی انہی جڑی بوٹیوں کی "کشش"تھی کہ انہیں وہاں کھینچ کر لے آئی تھی۔۔۔
:fight::pagal::D

لیکن جناب والا سمجھنے سے قاصر تھے۔۔۔اوپر سے جو کوا گزرا تھا وہ خود ناعمہ سسٹر تھی جنہوں نے ایک چیل سے ہوامیں اڑنے کی درخواست کی کہ انہیں الکمونیا کی سیر کروائے۔۔۔چیل نے ناعمہ سس کو پنجوں میں دبوچا اور لے اڑی۔۔۔نیچے ایک ٹیوب ویل سے ایک کسان اپنی فصلوں کو پانی دے رہا تھا کہ ناعمہ سسٹر سمجھیں کہ سیلابی ریلہ آرہا ہے۔۔۔۔
:D

خود ناعمہ سس بھی بے چین انہی جڑی بوٹیوں کی غائبانہ جستجو میں ہیں۔

لیکن فکر نہ کریں جڑی بوٹیاں اختر سائیں نکال کر انہیں پلادیں گے اور کے بعد دونوں ٹھیک ہوجائیں گے۔

:lasee::lol::lol::lol:
[automerge]1559964983[/automerge]
اصل میں جب سے الکمونیا کے کوے صبیح بھائی سے بعیت ہوئے ہیں وہ بھی اب بے سروپا حرکتیں کرنے لگے ہیں ، آخر کو پیر و مرشد کے اثرات بھی تو ظاہر ہونے ہیں، تو یہ ساری فلم اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے۔
:smajh-kar:
اندر کا منظر تو وہ تھا جب آپ نے پانی سے باہر آکر سنگین نتائج بھگتنے کی دھمکی دی تھی۔
:pagal::pagal::pagal::pagal::pagal:
لیکن آپ ندی میں کیا کر رہے تھے؟
:think:
الکمونیا میں ہونے والے الیکشن میں صبیح بھائی کا انتخابی نشان ڈڈو ہے اس لئے صبیح بھائی ڈڈو کا روپ دھار کر مینڈکوں کے ووٹ مانگنے وہاں گئے ہوئے تھے کہ یہ سانحہ رونما ہوا
:pagal::pagal::pagal::pagal::pagal::pagal::pagal:
الکمونیا ےالیکشن ہو رہے ہیں؟
یہ بات ہمارے علم میں کیوں نہیں ہے؟
:think:
ویسے بیسٹ آف لک صبیح بھائی
لک میں ل پر زبر ہے پیش مت پڑھیئے گا
:pagal::pagal::pagal::pagal::pagal::pagal:
اصل میں عام انتخابات نہیں ہیں بلکہ لومڑوں کی مخصوص نشست پر سابقہ امیدوار کے لاپتہ ہوجانے کی وجہ سے خالی ہونے والی نشست پر صبیح بھائی نے کاغذات جمع کروائے ہیں اور الیکٹرل پول میں الکمونیا کے طلسماتی جنگل کے مینڈک بہت بڑی تعداد میں شامل ہیں
اس لئے صبیح بھائی آج کل موسم کا حال بتانے والے کوے کو لے کر وہاں گھومتے رہتے ہیں کبھی مینڈک بن کر تالاب میں اتر جاتے ہیں اور جب تک مینڈک دھکے دے دے کر انہیں نکال باہر نہ کریں واپس نہیں آتے
:pagal::pagal::pagal::pagal::pagal::pagal::pagal::pagal::pagal:
:lol::lol::lol::lol::lol::lol::lol:
آپ دونوں کے پراپیگنڈے کے جواب میں پوسٹ نمبر 16 میں وضاحت کردی ہے۔
اس پوسٹ کے بعد اب آپ دونوں کی بات چیت بے معنی ہوکر رہ گئی ہے ۔
:stop:
:fight::pagal::pagal::pagal:
چھپڑ بھی کمال دلدلی بڑا سا پونڈ ہوتا ہے جس میں سنگھاڑے بھی جنم لیتے ہیں۔حکیم اسکے بہت نسخے بناتے ہیں اور ڈڈو آجکل سی پیک پر چایئنی روسٹ کرکے کھارہے ہیں۔ان حالات میں ڈڈو ووٹنگ کم ہو جانی ہے۔اور الیکشن میں ھارنے کے چانسز کم ہیں۔کوئی ڈیئل کرلیں۔مخالف پارٹی کو گورنر بناکر خود وزیر بن جایئں۔اور ایک جاودائی پھونک مرواکر پاور میں آ جایئیے​
ڈوڈو تو ہانگ کانگ میں چینے کھاتے ہیں،ہم نےکبھی اس شاپ سے مچھلی نہیں لی جو ساتھ ڈوڈو بھی فروخت کریں ۔
 
Last edited:

Naima

Staff member
★★★★☆☆
Contest Winner
Dynamic Brigade
Joined
May 8, 2018
Messages
1,720
Reaction score
1,729
Points
407
Location
الکمونیا - اسلام آباد
بھیا فکر ہی مت کیجیے، عید کی چھٹیاں بس اختام پذیر ہیں، پھر ہم نے آپ کا آپریشن کروا دینا ہے اور پھر آپ کی جو یہ تخیلاتی دنیا ہے اسکا پردہ آپ کی آنکھوں سے ہٹ جائے گا، ہماری باتیں جو آپ کو پروپیگنڈا معلوم ہوتی ہیں انکی حقیقت آپ پہ عیاں ہوجائے گی کہ ہم آپ کے خیر خواہ ہیں، دشمن نہیں
اور جو آپ کو کھجل سائیں اور اختر سائیں جیسے چالاک اور خطرناک لوگوں سے انسیت ہو رہی ہے کہ وہ آپ کو اپنا گدی نشین بنا دیں گے اور آپ پہ اپنے چرس کے خزانے کے دروازے کھول دیں گے ، تو آپ کی یہ خوش فہمی بھی دور ہوجائے گی
اور آپ روبوٹ سے واپس انسان بن جائیں گے
:popcorn:
گیٹ ویل سوون:phool:

@صبیح
 

صبیح

Thread Starter
★★★☆☆☆
Dynamic Brigade
Writer
Joined
May 5, 2018
Messages
1,880
Reaction score
2,329
Points
620
Location
Central
بھیا فکر ہی مت کیجیے، عید کی چھٹیاں بس اختام پذیر ہیں، پھر ہم نے آپ کا آپریشن کروا دینا ہے اور پھر آپ کی جو یہ تخیلاتی دنیا ہے اسکا پردہ آپ کی آنکھوں سے ہٹ جائے گا، ہماری باتیں جو آپ کو پروپیگنڈا معلوم ہوتی ہیں انکی حقیقت آپ پہ عیاں ہوجائے گی کہ ہم آپ کے خیر خواہ ہیں، دشمن نہیں
اور جو آپ کو کھجل سائیں اور اختر سائیں جیسے چالاک اور خطرناک لوگوں سے انسیت ہو رہی ہے کہ وہ آپ کو اپنا گدی نشین بنا دیں گے اور آپ پہ اپنے چرس کے خزانے کے دروازے کھول دیں گے ، تو آپ کی یہ خوش فہمی بھی دور ہوجائے گی
اور آپ روبوٹ سے واپس انسان بن جائیں گے
:popcorn:
گیٹ ویل سوون:phool:

@صبیح
اختر سائیں ملنگ چکی تائی کے علاج کے ڈر سے ڈاکٹر بھائی نے الکمونیا کے جنگلات میں ٹارزن کا روپ دھار لیا تو ناعمہ سس نے جادوگرنی کا روپ بنا کر فٹ پاتھ پر درختوں کی شاخوں سے دم کرنے کا بہروپ اپنایا۔
ڈاکٹر بھائی درخت در درخت چھلانگتے ہوئے کرورورورورو۔۔۔کی آوازیں نکال کر خود کو ٹارزن ثابت کرنے پر تلے ہوئے تھے لیکن ٹارزن کا جسم سڈول ہوتا ہے جبکہ ڈاکٹر بھائی کی ابھری ہوئی پسلیاں کسی صورت بھی ٹارزن کے بہروپ پر پوری نہیں اترتی تھیں، کوئی انہیں دیکھ کر فوراً سمجھ جاتا کہ یہ کوئی ٹارزن نہیں بلکہ "کارکن"ہیں۔

:pagal:

ناعمہ سس نے فٹ پاتھ پر بیٹھ کر اللہ ہو اللہ ہو کا ورد شروع کردیا۔۔۔کچھ لوگ ان کے پاس دم کے لیے آئے، ناعمہ سس نے درخت کی شاخیں ان کی پیٹھ پر پھیر کر کہا اس پر سائیں کا اثر ہوگیا ہے۔

چند ساحلوں کو سائیں کے اثرات سے ڈرا کر اصل سائیں اختر ملنگ چکی تائی کو مشکوک کردیا۔۔۔۔سائیں کو دیکھ کر ناعمہ سس چیخیں مارتی ہوئی بھاگ اٹھیں۔۔۔

سب نے سنا کہ وہ کہہ ہیں کہ "انہیں کسی علاج کی ضرورت نہیں"۔۔۔
:ouu::pagal:

اختر سائیں نے ایسے تعاقب کیا کہ اس کے پاؤں سے زمین پر دھب دھب کی آوازیں ابھر کر ناعمہ سس کو اپنے کانوں میں محسوس ہوئیں ۔۔۔سیدھا انہوں نے کھجل سائیں کی جھونپڑی میں جا پناہ لی ۔۔۔بغیر کسی تمہید۔۔۔کھجل سائیں کی جئے ہو کا نعرہ مار کر پناہ کی درخواست کر ڈالی۔۔۔اب ناعمہ سس خود پناہ میں ہیں تاکہ وہ علاج سے بچ جائیں۔
 

Naima

Staff member
★★★★☆☆
Contest Winner
Dynamic Brigade
Joined
May 8, 2018
Messages
1,720
Reaction score
1,729
Points
407
Location
الکمونیا - اسلام آباد
اختر سائیں ملنگ چکی تائی کے علاج کے ڈر سے ڈاکٹر بھائی نے الکمونیا کے جنگلات میں ٹارزن کا روپ دھار لیا تو ناعمہ سس نے جادوگرنی کا روپ بنا کر فٹ پاتھ پر درختوں کی شاخوں سے دم کرنے کا بہروپ اپنایا۔
ڈاکٹر بھائی درخت در درخت چھلانگتے ہوئے کرورورورورو۔۔۔کی آوازیں نکال کر خود کو ٹارزن ثابت کرنے پر تلے ہوئے تھے لیکن ٹارزن کا جسم سڈول ہوتا ہے جبکہ ڈاکٹر بھائی کی ابھری ہوئی پسلیاں کسی صورت بھی ٹارزن کے بہروپ پر پوری نہیں اترتی تھیں، کوئی انہیں دیکھ کر فوراً سمجھ جاتا کہ یہ کوئی ٹارزن نہیں بلکہ "کارکن"ہیں۔

:pagal:

ناعمہ سس نے فٹ پاتھ پر بیٹھ کر اللہ ہو اللہ ہو کا ورد شروع کردیا۔۔۔کچھ لوگ ان کے پاس دم کے لیے آئے، ناعمہ سس نے درخت کی شاخیں ان کی پیٹھ پر پھیر کر کہا اس پر سائیں کا اثر ہوگیا ہے۔

چند ساحلوں کو سائیں کے اثرات سے ڈرا کر اصل سائیں اختر ملنگ چکی تائی کو مشکوک کردیا۔۔۔۔سائیں کو دیکھ کر ناعمہ سس چیخیں مارتی ہوئی بھاگ اٹھیں۔۔۔

سب نے سنا کہ وہ کہہ ہیں کہ "انہیں کسی علاج کی ضرورت نہیں"۔۔۔
:ouu::pagal:

اختر سائیں نے ایسے تعاقب کیا کہ اس کے پاؤں سے زمین پر دھب دھب کی آوازیں ابھر کر ناعمہ سس کو اپنے کانوں میں محسوس ہوئیں ۔۔۔سیدھا انہوں نے کھجل سائیں کی جھونپڑی میں جا پناہ لی ۔۔۔بغیر کسی تمہید۔۔۔کھجل سائیں کی جئے ہو کا نعرہ مار کر پناہ کی درخواست کر ڈالی۔۔۔اب ناعمہ سس خود پناہ میں ہیں تاکہ وہ علاج سے بچ جائیں۔
ہاہاہا۔۔۔بہت دن کےبعدمزیدار کہانی پڑھنے کو ملی
صبیح بھائی کی خوبی یہ ہے کہ کہانی ایسے گھڑتے ہیں کہ منظر حقیقی معلوم ہو۔۔۔
:10xbvw3:
بس اب جلدی سے صبیح بھائی ٹھیک ہوجائیں، تاکہ اچھی اچھی کہانیاں پڑھنے کو ملیں
:phool:
گیٹ ویل سوون صبیح بھائی
:handshake:
 
Top