غزل:بس ایک کام ہے باقی، جو کرنا چاہتا ہوں

PakArt UrduLover

Thread Starter
in memoriam 1961-2020، May his soul rest in peace
Charismatic
Designer
Expert
Writer
Popular
ITD Observer
ITD Solo Person
ITD Fan Fictionest
ITD Well Wishir
ITD Intrinsic Person
Persistent Person
ITD Supporter
Top Threads Starter
Joined
May 9, 2018
Local time
6:53 PM
Threads
1,354
Messages
7,659
Reaction score
6,958
Points
1,508
Location
Manchester U.K
Gold Coins
112.41
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Get Unlimited Tags / Banners
Thread Highlight Unlimited
Thread Highlight Unlimited
Please, Log in or Register to view URLs content!

بس ایک کام ہے باقی، جو کرنا چاہتا ہوں
میں اپنی قوم کے غم ہی میں مرنا چاہتا ہوں

میں کیوں کہوں گا مرے رہنما لٹیرے ہیں
میں اپنے سر ہی یہ الزام دھرنا چاہتا ہوں

میں زخم زخم ہوں اپنے طبیب کے ہاتھوں
میں اپنے اشکوں سے یہ زخم بھرنا چاہتا ہوں

رکا ہوا ہوں کہیں میں، کسی کنارے پر
میں ایک دریا ہوں حد سے گزرنا چاہتا ہوں

میں دشت دشت بھٹکتا ہوا بگولا ہوں
کسی مقام پہ کب میں ٹھہرنا چاہتا ہوں

مرا بدن تو زمیں پر پڑا ہوا ہے کہیں
میں آسمان سے نیچے اترنا چاہتا ہوں
 
Top
AdBlock Detected

We get it, advertisements are annoying!

Sure, ad-blocking software does a great job at blocking ads, but it also blocks useful features of our website. For the best site experience please disable your AdBlocker.

I've Disabled AdBlock    No Thanks