کافی ہے

  1. Lovely Eyes

    عنبرین حسیب عنبر : اک گلی سے خوشبو کی رسم و راہ کافی ہے

    عنبرین حسیب عنبر : اک گلی سے خوشبو کی رسم و راہ کافی ہے لاکھ جبر موسم ہو یہ پناہ کافی ہے نیت زلیخا کی کھوج میں رہے دنیا اپنی بے گناہی کو دل گواہ کافی ہے عمر بھر کے سجدوں سے مل نہیں سکی جنت خلد سے نکلنے کو اک گناہ کافی ہے آسماں پہ جا بیٹھے یہ خبر نہیں تم کو عرش کے ہلانے کو ایک گناہ...
Top